fbpx

کٹاس راج مندر ازخودنوٹس کیس، سپریم کورٹ نے کس سے رپورٹ طلب کی؟ اہم خبر

کٹاس راج مندر ازخودنوٹس کیس، سپریم کورٹ نے کس سے رپورٹ طلب کی؟ اہم خبر

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ نے کٹاس راج مندر ازخودنوٹس کیس میں ماحولیاتی تحفظ ایجنسی سے پانی چوری سے متعلق رپورٹ طلب کر لی ہے۔ جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کٹاس راج مندر ازخود نوٹس کیس پر سماعت کی، دوران سماعت ڈی سی جہلم نے عدالت کو بتایا کہ بظاہر ٹیوب ویل کے پانی کا غلط استعمال نہیں ہو رہا، تمام ٹیوب ویلز پر واٹر میٹر نصب ہیں، جبکہ ڈی جی خان سیمنٹ کے 90 فیصد تالاب بھرے ہوئے ہیں۔

کٹاس راج مندرکا تالاب خشک ہونے سے متعلق کیس کی سماعت ،عدالت کا حکومت کو بڑا حکم

جس پر درخواست گزار رمیش کمار نے کہا کہ عدالت نے گزشتہ سال سے زیر زمین پانی کے استعمال پر پابندی لگا رکھی ہے، آج تک کٹاس راج کا پانی واپس نہیں آیا، جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ ممکن ہے زیر زمین پانی کا رخ تبدیل ہوگیا ہو۔ رمیش کمار نے کہا کہ دیکھنا ہے کہیں سیمنٹ فیکٹری نے خفیہ پمپ تو نہیں لگا رکھا،اس موقع پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دئیے کہ جتنا پانی کا ذخیرہ بتایا جا رہا ہے کیا علاقہ میں اتنی بارش ہوئی ہے؟

اکیلی عورت لفٹ لے کر فرنٹ سیٹ پر کیسے بیٹھ گئی، عدالت کے ریمارکس

نفرت انگیزمواد پھیلانے کے مجرم کی بریت کی درخواست مسترد

سپریم کورٹ میں بحریہ ٹاؤن کی جمع ہونے والی رقم، وفاقی حکومت نے بڑا مطالبہ کر دیا

دوران سماعت جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ جس ٹیوب ویل کا استعمال زیادہ ہے اسے دیکھنے کی ضرورت ہے،اگر ٹیکنیکل طریقے سے پانی چوری ہو رہا ہے تو ماہرین کی آرا پر مبنی رپورٹ دیں،آگاہ کیا جائے کہ کٹاس راج مندر کا تالاب خشک کیوں ہو جاتا ہے۔ عدالت نے ماحولیاتی تحفظ ایجنسی سے پانی چوری سے متعلق رپورٹ طلب کر تے ہوئے کیس کی سماعت جنوری 2020 تک ملتوی کر دی