موسمیاتی ایکشن میں صنفی شمولیت کیلیے پاکستان کا عزم غیر متزلزل ہے۔رومینہ خورشید عالم

0
99
romina khursheed

وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی کوآرڈینیشن رومینہ خورشید عالم نے کہا کہ قومی دھارے اور موسمیاتی ایکشن میں صنفی شمولیت کے لیے پاکستان کا عزم غیر متزلزل ہے۔

رومینہ خورشید عالم کا کہنا تھا کہ ہماری قومی موسمیاتی پالیسی اور موافقت کے منصوبوں میں جنس کو بجا طور پر ایکشن کے لیے ترجیح دی گئی ہے۔ وہ پاکستان جینڈر کلائمیٹ ایوارڈ 2024 کے دوسرے ایڈیشن سے خطاب کر رہی تھیں، جس کی میزبانی سول سوسائٹی کے اتحاد برائے موسمیاتی تبدیلی نے فرانس کے سفارت خانے، فرانسیسی ترقیاتی ادارے، پاکستان میں یورپی یونین کے وفد، متحدہ عرب امارات کے سفارت خانے اور یو این ڈی پی کے تعاون سے کی تھی۔

وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر رومینہ خورشید عالم کا کہنا تھا کہ اس تقریب ایوارڈ کے ذریعے کامیابی حاصل کرنے والی خواتین کی پہچان صنف اور آب موسمیات کے درمیان اہم گٹھ جوڑ کو واضح کرتی ہے۔ یہ اس ناگزیر کردار کی طاقتور یاد دہانی کے طور پر کام کرتا ہے جو خواتین اکثر موسمیاتی چیلینجر اور رکاوٹوں کا سامنا کرتے ہوئے موسمیاتی عمل کو آگے بڑھانے میں ادا کرتی ہیں۔ وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر نے موسمیاتی لحاظ سے پائیدار مستقبل کی طرف اس اجتماعی سفر میں تعاون اور شراکت داری کے لیے تقریب میں نمائندگی کرنے والی غیر ملکی حکومتوں کی بھی دلی تعریف کی۔

کامیابی حاصل کرنے والی خواتین کو مبارکباد دیتے ہوئے، انہوں نے کلائمیٹ بیٹ رپورٹر شبیر کو بھی یاد کیا جو رپورٹنگ کے دوران انتقال کر گئے اور موسمیاتی تبدیلی کے بارے میں آگاہی پیدا کر رہے تھے اور کہا کہ ان کی وزارت ان کے نام سے منسوب کلائمیٹ ایوارڈ پر کام کر رہی ہے۔

9 مئی کی آڑ میں چادرو چار دیواری کی عزت کو پامال کرنیوالے معافی مانگیں،یاسمین راشد

عوام نے نومئی کے بیانیے کو مستر د کر دیا ،مولانا فضل الرحمان

اسد قیصر نے نومئی کے واقعات پر معافی مانگنے سے انکار کر دیا

نومئی، پی ٹی آئی نے احتجاج پروگرام تشکیل دے دیا

9 مئی پاکستان کیخلاف بہت بڑی سازش جس کا ماسٹر مائنڈ بانی پی ٹی آئی،عظمیٰ بخاری

عمران خان سے اختلاف رکھنے والوں کی موت؟

سانحہ نو مئی نائن زیرو، بلاول ہاؤس یا رائے ونڈ سے پلان ہوتا تو پھر ردعمل کیا ہوتا؟ بلاول بھٹوزرداری

یہ لوگ منصوبہ کرچکے ہیں نو مئی کا واقعہ دوبارہ کروایا جائے

نو مئی جلاؤ گھیراؤ، پہلا فیصلہ آ گیا، 51 ملزمان کو ملی سزا

توانائی کی منصفانہ منتقلی کو یقینی بنانے کےلئے کثیر الجہتی تعاون ناگزیر ہے، رومینہ
سبز توانائی کی طرف منتقلی کے لئے منافع اور مسابقت کو فروغ دینے کی ضرورت ہے : ڈاکٹر عابد سلہری
ٹیکسٹائل سیکٹر میں توانائی کی منتقلی کے موضوع پر سمپوزیم سے ثوبیہ بیکر ،عقیل جعفری اور دیگر کا خطاب
ماہرین نے کہا ہے کہ صنعتی شعبے میں توانائی کی منتقلی کو آگے بڑھانے کےلئے سرکاری اور نجی شعبے کے درمیان کوآرڈینیشن کو تیز کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے پاکستان میں توانائی کی منصفانہ منتقلی کو یقینی بنانے کے لئے کثیر الجہتی تعاون پر زور دیا۔ انہوں نے یہ باتیں پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی)اور جرمنی کی کلائمیٹ اینڈ انرجی پارٹنرشپ (پی جی سی ای پی) نے ٹیکسٹائل سیکٹر میں توانائی کی منتقلی کے موضوع پرمشترکہ سمپوزیم سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔

سمپوزیم سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم نے کہا کہ پاکستان کی ٹیکسٹائل اور دیگر صنعتوں کو کاربن بارڈر ایڈجسٹمنٹ میکانزم (سی بی اے ایم) کی وجہ سے آنے والے چیلنجوں سے نمٹنے اور اس عمل کو آسان بنانے کے لئے متعلقہ سٹیک ہولڈرز کے ساتھ مشاورت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کاری کا کردار انتہائی اہم ہے اور وہ اقتصادی امور، کامرس، بجلی، منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات کی وزارتوں سمیت اس موضوع سے متعلق دیگر وزارتوں کے ساتھ رابطے میں ہے۔ ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہا کہ ملک کو ایک طرف اپنی مسابقت اور معاشی نمو کو بہتر بنانا ہے تو دوسری طرف معاشی بحران، شرح سود میں اضافہ اور سی بی اے ایم کے مسائل ہیں۔ وزیر اعظم نے موسمیاتی گورننس اور فنانس ریویو پر کمیٹیاں تشکیل دی ہیں جس کی سربراہی ڈپٹی چیئرمین پلاننگ کمیشن اور وزیراعظم کے کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی کر رہے ہیں۔انہوںنے کہا کہ سبز توانائی کی منتقلی کے لئے منافع اور مسابقت کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔اپنے افتتاحی کلمات میں پاکستان جرمن کلائمیٹ اینڈ انرجی پارٹنرشپ (پی جی سی ای پی) کی مشیر ثوبیہ بیکر نے پاکستان کے ٹیکسٹائل سیکٹر کو درپیش چیلنجز کے حل اور آگے بڑھنے کے لیے کھل کر بات چیت کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میں موسمیاتی تبدیلی سے متعلق چیلنجز سے نمٹنے کےلئے ایک مکمل معاشرے کے نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔پاکستان میں جرمن سفارتخانے کی ڈپٹی ہیڈ آف ڈیولپمنٹ کوآپریشن ہیلن پاسٹ نے کہا کہ توانائی کا شعبہ مسلسل پائیدار طریقوں کی طرف منتقل ہو رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ جرمنی توانائی کی منصفانہ منتقلی کی کوششوں میں پاکستان کی مدد کےلئے پرعزم ہے۔ ہم اس جانب پیش رفت میں پاکستان کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ ٹیکسٹائل کی پراجیکٹ لیڈر یولیا بچینووا نے جرمنی اور پاکستان کی حکومتوں کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے پاکستان کے سرکاری اور نجی شعبے کے درمیان مکالمے کے لئے ہم آہنگی پیدا کرنے میں مدد فراہم کی۔ ایس ڈی پی آئی کی ایسوسی ایٹ ریسرچ فیلو زینب نعیم نے ٹیکسٹائل کے شعبے میں توانائی کی منتقلی کے مواقع اور چیلنجز پر پہلے پینل کی نظامت کی۔

پاکستان ٹیکسٹائل کونسل کے سی ای او شیخ محمد اقبال نے ٹیکسٹائل انڈسٹری کے ڈھانچے اور ویلیو چین پر بریفنگ دی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی ٹیکسٹائل انڈسٹری صرف توانائی کی منتقلی کے لئے پرعزم ہے تاہم، قومی سطح پر کسی بنیادی اعداد و شمار کی عدم موجودگی کے باوجود آب و ہوا کی مالیات اور توانائی کی منتقلی کے بارے میں کوئی پالیسی نہیں ہے۔

اپٹما کے سیکرٹری جنرل شاہد ستار نے کہا کہ مصنوعات کی لازمی ٹریسیبلٹی ضروری ہے کیونکہ اگر کاروبار معمول کے مطابق جاری رہتا ہے تو سی بی اے ایم ایک وجودی خطرہ ہوگا۔ وزارت توانائی کے پرائیویٹ پاور اینڈ انفراسٹرکچر بورڈ (پی پی آئی بی) عقیل حسین جعفری نے کہا کہ توانائی وہ اہم جزو ہے جو برآمدی مصنوعات میں مسابقت لاتا ہے۔ تاہم، شمسی توانائی صنعت کے لئے بجلی اور پیداوار کی لاگت کو کم کرنے کا موقع فراہم کرتی ہے۔ڈائریکٹر جنرل گوجرانوالہ الیکٹرک پاور کمپنی (ڈی جی گیپکو) نے کہا ہے کہ ٹیکسٹائل سیکٹر میں توانائی کی منتقلی میں فنانسنگ اخراجات اہم رکاوٹیں ہیں۔ ایس ڈی پی آئی میں انرجی یونٹ کے سربراہ انجینئر عبید الرحمن ضیاءنے ٹیکسٹائل سیکٹر میں توانائی کی منتقلی کے مواقع اور چیلنجز پر دوسرے پینل کی نظامت کی۔ سینئر اکانومسٹ عافیہ ملک نے کہا کہ مسابقتی مارکیٹ آگے بڑھنے کا راستہ ہے لیکن ہمیں آزاد اور منظم مارکیٹ کے درمیان فیصلہ کرنے کی ضرورت ہے، کیونکہ آزاد مارکیٹ منصفانہ اور مسابقتی ہے۔

اسلام آباد الیکٹرک سپلائی کمپنی (آئیسکو) کے سی ای او محمد امجد نے کہا کہ مجوزہ نظام کو زمینی حقائق سے ہم آہنگ کرنے کی ضرورت ہے ۔سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی کے عمر ہارون نے کہا کہ ٹیکس بل اور کراس سبسڈی کے تجزیے کے ساتھ ساتھ ٹیرف کی تفہیم کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) کے مشیر سی ٹی بی سی ایم گل حسن بھٹو نے کہا کہ حکومت کو توانائی کے شعبے کے دائرہ کار کو بڑھانے اور توانائی کے تحفظ کے اہداف کے حصول کے لئے مسابقتی مارکیٹ کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔ تیسرے سیشن میں توانائی کی منتقلی کے لئے فنانس کو متحرک کرنےکے مواقع اور چیلنجز پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

Leave a reply