fbpx

شرمیلا فاروقی کا عائزہ خان کے ڈرامے میں جنسی ہراسانی کو لاپرواہی سے دکھانے پر برہمی کا اظہار

پاکستان پیپلز پارٹی کی رکن سندھ اسمبلی شرمیلا فاروقی نے عائزہ خان کے نئے ڈرامے”لاپتہ” میں جنسی ہراسانی جیسے حساس موضوع کو لاپرواہی سے دکھانے پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔

باغی ٹی وی : اداکارہ عائزہ خان ڈراما سیریل ’’لاپتہ‘‘ میں گیتی نامی ٹک ٹاکر کا کردار ادا کررہی ہیں ڈرامے کی ابھی صرف ایک قسط ہی نشر ہوئی ہے تاہم پہلی قسط میں دکھائے جانے والے ایک سین پر لوگوں کی جانب سے تشویش اور تحفظات کا اظہار کیا جارہا ہے۔

ڈرامے کے سین میں عائزہ خان کو ایک دوکان سے خریداری کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے اور جب دوکاندار اس سے اپنے پچھلے بقایا پیسوں کا تقاضہ کرتا ہے تو گیتی اسے سوشل میڈیا کی طاقت کا مظاہرہ دکھاتے ہوئے دوکاندار پر غلط الزامات لگاکر ویڈیو بنانی شروع کردیتی ہے اور اسے بلیک میل کرتی ہے۔ جس پر دوکاندار گھبرا کر اپنے پیسوں کے تقاضے سے ہی دستبردار ہوجاتا ہے۔


ڈرامے کے اس سین پر جہاں بہت سارے لوگوں نے تحفظات کا اظہار کیا وہیں شرمیلا فاروقی نے کسی پر ہراسانی کے جھوٹے الزامات لگانے کو ڈرامے میں اتنی لاپرواہی سے دکھانے پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے اپنی انسٹاگرام پوسٹ میں لکھا کہ ڈراماسیریل ’’لاپتہ‘‘ کے ایک کلپ نے مجھے حیرت زدہ کردیا جس میں عائزہ خان کو گیتی کے کردار میں ایک دوکاندار کو ہراسانی کے جھوٹے الزامات لگاکر بلیک میل کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

شرمیلا فاروقی نے لکھا یقین کریں ہراسانی ایک حقیقت ہے یہ تکلیف دہ ہے اور آپ کو تباہ کردیتی ہے ہمارے ملک میں خواتین اپنے خلاف ہونے والے جرائم کی وجہ سے جہنم سے گزررہی ہیں ایسے پاکستانی ڈرامے جو اس قسم کے مسائل کے بارے میں انتہائی بے حسی کا مظاہرہ کرتے ہیں انہیں ملک بھر میں خواتین کو درپیش حقیقی مسائل کی ایسی ناقص عکاسی کی ذمہ داری لینے کی ضرورت ہے۔

رکن سندھ اسمبلی نے مزید لکھا عام لوگ ڈراموں اور ان میں کام کرنے والے اداکاروں کو دیکھ کر انہیں سچ مانتے ہیں آپ ان لوگوں کو کیا پیغام دے رہے ہیں؟ ہمارے ملک میں بڑے پیمانے پر خواتین اور انسانیت کے خلاف بھیانک جرائم میں بدقسمتی سے اضافہ دیکھا گیا ہے اور اس طرح کے ڈرامے حالات کو مزید بدتر کرسکتے ہیں۔

اس کے ساتھ ہی شرمیلا فاروقی نے عائزہ خان سے محبت کا اظہار کرتے ہوئے ان کی دوسرے ڈراموں میں پرفارمنس کی تعریف بھی کی-

رکن سندھ اسمبلی شرمیلا فاروقی کی پوسٹ پر کمنٹ کرتے ہوئے کامیڈین ، اداکار، پروڈیوسر علی گل پیر نے کہا کہ ان میں سے بیشتر ڈرامے مردوں کے لکھے ہوئے ہیں یا مردوں کے تیار کردہ ہیں جو اپنے ایجنڈے کے لیے جتنا ممکن ہو سکے "جھوٹے الزام” کی داستان حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ یہ نہیں کہ جھوٹے الزامات نہیں لگتے لیکن وہ اقلیت ہیں ، ہمیں اس اہم مسئلے پر توجہ دینی چاہیے جو کہ عصمت دری ، ہراساں کرنے ، چھیڑ چھاڑ وغیرہ کے اصل معاملات ہیں۔

مردوں کو چاہیے کہ نگاہیں نیچی رکھیں اور عورتیں… وینا ملک بھی وزیراعظم کے حالیہ بیان پر بول…

ڈیڑھ سال سے ایک خاتون مسلسل، ہراساں اور بلیک میل کر رہی ہے عثمان مختار

عثمان مختار کو ہراساں اور بلیک میل کرنے والی خاتون منظر عام پر آگئی