سپریم کورٹ نے عام انتخابات کی اجازت دے دی

سپریم کورٹ نے عام انتخابات کی اجازت دے دی

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ نے گلگت بلتستان میں عام انتخابات کی اجازت دے دی

سپریم کورٹ نے گلگت بلتستان آرڈر 2018 میں ترمیم کی اجازت دے دی،سپریم کورٹ نے مختصر فیصلہ سنا دیا، تفصیلی فیصلہ بعد میں سنایا جائے گا

جسٹس اعجازالاحسن کا کہنا تھا کہ تفصیلی فیصلے میں الیکشن کرانےکا طریقہ کار واضح کردیں گے،جی بی میں الیکشن کیلئے الیکشن ایکٹ 2017 کا اطلاق کردیا جائے تو مسئلہ ہوجائے گا؟ چیف جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ نئے الیکشن کرانے کےلیےالیکشن کمیشن کون ہوگا؟ اٹارنی جنرل نے کہا کہ الیکشن کمیشن گلگت بلتستان میں پہلے سے موجود ہے،جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ عدالتی حکم کے مطابق آرڈر 2018 ابھی لاگو ہے،

واضح رہے کہ گزشتہ سماعت پر اٹارنی جنرل سپریم کورٹ میں میں پیش ہوئے تھے، اٹارنی جنرل نے کہا تھا کہ گلگت بلتستان کی حکومت کی موجودہ ٹرم 24 جون 2020 کو ختم ہو رہی ہے، جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ اس سے پہلے بھی گلگت بلتستان حکومت کی ٹرم ختم ہوتی رہی،ماضی میں گلگت بلتستان میں الیکشن کس قانون کے تحت ہوتے رہے،

اٹارنی جنرل خالد جاوید نے کہا کہ 2015کا الیکشن آرڈر 2009 کے تحت ہوا،گلگت بلتستان آرڈر 2018 نگران سیٹ اپ کے حوالے سے خاموش ہے، عدالت نے کہا کہ سپریم کورٹ کے 2019 کے فیصلے کے بعد حکومت نے قانون سازی کیوں نہیں کی؟

جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ گلگت بلتستان کی بڑی سیاسی اور عالمی اہمیت ہے،گلگت بلتستان کی گورننس آوَٹ اسٹینڈنگ ہونی چاہیے، حکومت نے جو کرنا ہے خود کرے،

کرونا سے نمٹنے کیلیے ناکافی اقدامات، چیف جسٹس نے لیا پہلا از خود نوٹس

مبینہ طور پر کرپٹ لوگوں کو مشیر رکھا گیا، از خود نوٹس کیس، چیف جسٹس برہم، ظفر مرزا کی کارکردگی پر پھر اٹھایا سوال

ماسک سمگلنگ کے الزامات، ڈاکٹر ظفر مرزا خود میدان میں آ گئے ،بڑا اعلان کر دیا

میٹنگ میٹنگ ہو رہی ہے، کام نہیں ، ہسپتالوں کی اوپی ڈیز بند، مجھے اہلیہ کو چیک کروانے کیلئے کیا کرنا پڑا؟ چیف جسٹس برہم

ڈاکٹر ظفر مرزا کی کیا اہلیت، قابلیت ہے؟ عوام کو خدا کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ، چیف جسٹس

اللّٰہ کے احکامات کی خلاف ورزی کی تو دنیا میں فساد ہی پیدا ہوگا، سپریم کورٹ

جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ گلگت بلتستان کیلئے پہلے بھی صدارتی آرڈر جاری ہوتے رہے اب بھی کر لیں،اٹارنی جنرل نے کہا کہ نئی قانون سازی میں اگست 2019 میں ریجن میں ہوئی تبدیلوں کو بھی مدنظر رکھنا ہے،چیف جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ گلگت بلتستان کے شہریوں کو بھی وہی حقوق ملنے چاہیئں جو پاکستانی شہریوں کو حاصل ہیں،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.