اچھے تعلقات کے خواہشمند، مگر مداخلت کرتے ہیں اور نہ کرنے دیتے ہیں، افغان طالبان کا ترکی کو پیغام

0
37
اچھے تعلقات کے خواہشمند، مگر مداخلت کرتے ہیں اور نہ کرنے دیتے ہیں، افغان طالبان کا ترکی کو پیغام #Baaghi

اچھے تعلقات کے خواہشمند، مگر مداخلت کرتے ہیں اور نہ کرنے دیتے ہیں، افغان طالبان کا ترکی کو پیغام

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق افغانستان میں ترکی کی فوج کے رہنے کے حوالہ سے افغان طالبان نے اعلامیہ جاری کیا ہے

افغان طالبان کی امارت اسلامیہ کی جانب سے جاری اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ ہر کوئی جانتا ہے کہ تمام غیر ملکی قوتیں دوحہ معاہدے کی بنیاد پر ہمارے پیارے وطن سے دستبردار ہوں گی – اقوام متحدہ اور بین الاقوامی برادری کی طرف سے فیصلہ کیا گیا ہے اور ساتھ ہی ترکی کے وزیر خارجہ سمیت اکثر ممالک نے اس کا خیرمقدم اور توثیق کی تھی ۔ اور دستخط کرنے کی تقریب میں موجود تھے۔اب چونکہ ترکی کی قیادت نے امریکہ کے کہنے پر ہمارے ملک پر قبضے کو برقرار رکھنے اور بڑھانے کا اعلان کیا ہے ، لہذا درج ذیل نکات قابل غور ہیں

1 – امارت اسلامیہ اور افغان عوام ترکی کے مسلم عوام کے ساتھ تاریخی ، ثقافتی اور مذہبی رشتوں کو برقرار رکھتے ہیں۔ قبضے میں توسیع ترک ملک کے حکام کے خلاف ہمارے ملک کے اندر ناراضگی اور دشمنی کے جذبات پیدا کرے گی اور دوطرفہ تعلقات کو نقصان پہنچائے گی۔

2 – ترک قیادت کا فیصلہ ناجائز ہے ، جو ہماری خودمختاری اور علاقائی سالمیت کی خلاف ورزی ہے اور ہمارے قومی مفادات کے خلاف ہے۔ امارت اسلامیہ افغانستان اس قابل مذمت فیصلے کی سخت الفاظ میں مذمت کرتی ہے کیونکہ اس سے ترکی اور افغان ممالک کے مابین مسائل پیدا ہوں گے۔ اور ہم ترک عہدیداروں سے پرزور اپیل کرتے ہیں کہ وہ اس فیصلے کو واپس لیں

3 – کسی بھی غیر ملکی فوج کے خلاف 2001 میں جاری ہونے والے 15 سو ممتاز علماء کرام کے فتوے کی روشنی میں کاروائی کی جائے گی، اسی کے تحت گزشتہ 20 برسوں سے جہاد کر رہے ہیں ، ہم مسلم ترک عوام اور اس کے سیاستدانوں سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ اس فیصلے کے خلاف آواز اٹھائیں کیونکہ یہ نہ تو ترکی اور نہ ہی افغانستان کے لئے فائدہ مند ہے ، بلکہ اس سے دونوں ہی مسلم ممالک کے مابین مسائل اور مسائل پیدا ہوتے ہیں۔

5 – ہماری پالیسی ہے کہ ہم باہمی طرز عمل کی بنیاد پر تمام ممالک کے ساتھ اچھے اور مثبت تعلقات کی تلاش میں ہیں۔ ہم نہ تو دوسروں کے معاملات میں مداخلت کرتے ہیں اور نہ ہی دوسروں کو اپنے معاملات میں مداخلت کرنے دیتے ہیں۔

6 – ہم ترک عہدیداروں کو یاد دلاتے ہیں کہ بہتر ہے کہ ہم اس طرح کے ناجائز فیصلے کرنے کی بجائے اصولوں کی روشنی میں مثبت اور اچھے تعلقات برقرار رکھیں ، ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کا ہاتھ بڑھا دیں اور مشترکہ چیلنجوں اور مفادات کے لئے مشترکہ پوزیشن اپنائیں۔ .

7 – ہم کچھ عرصے سے ترک اہلکاروں سے رابطے میں تھے اور متعدد ملاقاتیں کیں جہاں انہوں نے ہمیں یقین دہانی کرائی کہ وہ ہماری منظوری کے بغیر ایسا یکطرفہ فیصلہ نہیں کریں گے۔ موجودہ فیصلہ کر کے انھوں نے اپنے وعدے کی خلاف ورزی کی ہے۔

امارت اسلامیہ افغانستان کی جانب سے مزید کہا گیا کہ اگر ترک حکام ہمارے ملک افغانستان پر قبضہ جاری رکھتے ہیں تو امارات اسلامیہ اور افغان قوم اپنی حب الوطنی کے مطابق انکے خلاف موقف اپنائے گی کیونکہ وہ ان کےخلاف کھڑے ہوئے ہیں اس حوالہ سے تمام تر نتایج کی ذمہ داری ان لوگوں پر آئے گی جو دوسروں کے کاموں میں مداخلت کرتے ہیں اور ایسے ناجائز فیصلے مسلط کرتے ہیں

بگرام ساتواں ایئر بیس تھا جو خالی کیا، افغانستان سے مکمل انخلاکب تک ہو گا؟ پینٹاگون نے بتا دیا

انڈیا سے مذاکرات؟ کابل پر قبضہ کیسے کرنا؟ طالبان ترجمان ملا ذبیح اللہ مجاہد کا مبشر لقمان کو خصوصی انٹرویو آج رات دس بجے

افغان طالبان نے روس کو بڑی یقین دہانی کروا دی

طالبان گلگت بلتستان پہنچ گئے؟ قائمہ کمیٹی میں مشاہد حسین سید کا ڈاکٹر معید یوسف سے سوال

طالبان کا لباس سادہ لیکن وہ انتہائی ذہین اور قابل،اگریہ کام ہو گیا تو پاکستان کو نقصان ہو گا،وزیر خارجہ

Leave a reply