fbpx

بورس جانسن نے ندیم زہاوی کو وزیر خزانہ اور اسٹیو بارکلے کو ہیلتھ سیکرٹری مقرر کر دیا

رشی سنک اور ساجد جاوید دونوں کنزرویٹو ڈیمو کریٹک پارٹی سے مستعفیٰ ہو گئے ہیں جس کے بعد بورس جانسن نے عراقی نژاد سیکریٹری تعلیم ندیم زہاوی کو نیا وزیر خزانہ اور برطانیہ کی کابینہ کے چیف آف اسٹاف اسٹیو بارکلے کو سیکریٹری صحت مقرر کر دیا ہے-

باغی ٹی وی : ڈیلی میل کے مطابق وزیر اعظم اب کے سابق چانسلر اور ہیلتھ سکریٹری کی طرف سے استعفوں کے تناظر میں نقصانات کو محدود کرنے کی ایک مایوس کن جنگ میں مصروف ہیں، جو اپنی ‘دیانتداری’ اور قابلیت کی کمی پر ایک دوسرے کے منٹوں میں واک آؤٹ کر گئے۔

پاکستانی نژاد رکن پارلیمنٹ ثاقب بھٹی بھی حکومتی عہدے سے مستعفٰی

ایگزٹ اس وقت ہوا جب بورس جانسن نے شرمندہ ایم پی کرس پنچر کو ڈپٹی چیف وہپ کے طور پر اپنی تقرری پر سخت معذرت کے ساتھ بحران سے نکلنے کی کوشش کی اس گھبراہٹ کے درمیان کہ کابینہ کے مزید وزراء اس کی پیروی کر سکتے ہیں، وزیر اعظم بور س جانسن نے اپنےموجودہ چیف آف اسٹاف اسٹیو بارکلے کو مسٹر جاوید کی جگہ صحت اور سماجی نگہداشت کے محکمے میں کی ذمہ داری سونپ دی ہے-

5 جولائی بروز منگل، برطانیہ کے وزیر خزانہ رشی سنک اور سیکرٹری صحت ساجد جاوید کے مستعفی ہونے کے بعد رات کو حیران کن، برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نےخود کو بچانے کے لیے منگل کو دیر گئے، ایک نیا وزیر خزانہ اور نیا صحت سیکرٹری مقرر کیا۔

رپورٹ کے مطابق عراقی نژاد سیکریٹری تعلیم، ندیم زہاوی کو نیا وزیر خزانہ اور برطانیہ کی کابینہ کے چیف آف اسٹاف اسٹیو بارکلے کو سیکریٹری صحت مقرر کیا گیا ہے۔

بعد میں، انہوں نے اعلان کیا کہ ندیم زاہاوی ٹریژری میں مسٹر سنک کی جگہ لیں گے، مشیل ڈونیلن کو زاہاوی کی جگہ پر ترقی دے کر سیکرٹری ایجوکیشن بنا دیا گیا ہے ڈاؤننگ اسٹریٹ نے بتایا کہ زہاوی کی تقرری کی منظوری ملکہ الزبتھ دوم نے دی تھی۔

سٹیو بارکلے نے کہا کہ ہیلتھ سیکرٹری کا کردار ادا کرنا ایک اعزاز کی بات ہے یہ حکومت ہماری NHS اور نگہداشت کی خدمات میں پہلے سے کہیں زیادہ سرمایہ کاری کر رہی ہے تاکہ کووِڈ بیک لاگ کو شکست دی جا سکے، مزید 50,000 نرسوں کی بھرتی ہو، سماجی نگہداشت میں اصلاحات کی جائیں اور یہ یقینی بنایا جا سکے کہ ملک بھر کے مریضوں کو علاج معالجے کی بہترین سپولیات فراہم کی جا سکیں-

پاکستانی نژاد برطانوی وزیرصحت نے استعفیٰ دے دیا

جانسن کے فوری طور پر بچنے کے امکانات نائب وزیر اعظم ڈومینک راب، خارجہ سکریٹری لز ٹرس، ہوم سکریٹری پریتی پٹیل، ڈیفنس سیکریٹری بین والیس اور ورک اینڈ پنشن سیکریٹری تھریس کوفی نے یہ اعلان کرتے ہوئے بڑھا دیے کہ وہ مستعفی نہیں ہوں گے۔

ٹوری کے وائس چیئر بِم افولامی نے لائیو ٹی وی پر پارٹی چھوڑنے کا اعلان کیا، جب کہ سابق وفادار جوناتھن گلس، ثاقب بھٹی، نکولا رچرڈز اور ورجینیا کراسبی نے بھی استعفیٰ دے دیا ہے جبکہ تھیو کلارک اور اینڈریو موریسن نے بھی کینیا اور مراکش کے تجارتی ایلچی کی حیثیت سے استعفیٰ دے دیا۔

لارڈ فراسٹ، جو پہلے مسٹر جانسن کے بریگزٹ کے اہم ایلچی تھے، نے کہا کہ مسٹر سنک اور مسٹر جاوید نے ‘صحیح کام’ کیا ہے اور وزیر اعظم تبدیل نہیں ہو سکتے۔

یہاں تک کہ کابینہ کے وزراء بھی جگہ جگہ ٹھہرے ہوئے تھے،ایک پارٹی کارکن نے میل آن لائن کو بتایا کہ ان کے کچھ قریبی ساتھیوں کی ‘پی ایم کے ساتھ ہمدردی ختم ہوگئی ہے’۔

ایران چند ہفتوں میں جوہری بم بنا سکتا ہے،امریکی ایلچی

ٹوری بیک بینچر اینڈریو برجن نے بورس جانسن کو خبردار کیا کہ بیک بینچ 1922 کمیٹی ان کی قیادت کے ساتھ ‘ڈیل’ کرے گی۔

وزیر اعظم کے ناقد مسٹر برجن نے کہا پورٹکلس ہماری پارلیمنٹ کا نشان ہے، یہ ہماری جمہوریت کا آخری دفاع ہے۔ ‘1922 کی کمیٹی وزیر اعظم سے نمٹے گی، یہ اسی کے لیے بنائی گئی تھی۔’

وزیر اعظم کو کنزرویٹو ایم پیز کی چالوں کا سامنا ہے، جو ان کے خلاف اعتماد کا ووٹ دوبارہ چلانے کے لیے 1922 کی کمیٹی کے قوانین کو تبدیل کرنے کی امید کر رہے ہیں۔

بریگزٹ منسٹر جیکب ریس موگ کو آج رات براڈکاسٹ اسٹوڈیوز میں بھیجا گیا، اس بات پر اصرار کیا گیا کہ وزیر اعظم کے جانے کی کوئی ‘آئینی’ وجہ نہیں ہے۔

مسٹر ریزموگ نے ​​کہا کہ استعفوں کے بعد مسٹر جانسن کا موڈ ‘معمول کے مطابق’ تھا اور انہیں اب بھی امید ہے کہ وہ نمبر 10 میں رابرٹ والپول کے 21 سال کے ریکارڈ کو شکست دیں گے۔

اپنے استعفیٰ خط میں مسٹر سنک نے خبردار کیا کہ ہم اس طرح کام جاری نہیں رہ سکتے’ اور وہ اپنا سیاسی کیریئر قربان کرنے کے لیے تیار ہیں عوام بجا طور پر توقع کرتے ہیں کہ حکومت مناسب طریقے سے، قابلیت اور سنجیدگی سے چلائی جائے-

دریں اثنا، مسٹر جاوید نے مسٹر جانسن کی دیانتداری، قابلیت اور قومی مفاد میں کام کرنے کی صلاحیت پر سوال اٹھایا۔

مصر کو نہر سویز کی وجہ سے 7 بلین ڈالر سے زائد کی ریکارڈ سالانہ آمدنی

دوسری اہم پیش رفتوں میں جب حکومت آج رات افراتفری میں اتر رہی ہے Keir Starmer نے فوری طور پر عام انتخابات کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ‘آئیے برطانیہ کے لیے ایک نئی شروعات کریں۔

بکیز نے مسٹر جانسن کے اس سال نمبر 10 سے باہر ہونے کے لیے مشکلات پیدا کر دی ہیں۔

ڈیلی میل نے رپورٹ میں کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ رشی سنک اور مسٹر جاوید نے ٹوری باغی ایم پیز کی کالوں پر فیصلہ کیا جو مسٹر جانسن کی حکومت کو گرانے والے تازہ ترین سلیز اسکینڈل پر کابینہ کے وزراء سے کارروائی کا مطالبہ کر رہے تھے۔

جاوید نے وزیر اعظم کو بتایا کہ یہ بہت افسوس کے ساتھ ہے کہ مجھے آپ کو بتانا ضروری ہے کہ میں اب اس حکومت میں خدمات جاری نہیں رکھ سکتا ‘میں فطری طور پر ٹیم کا کھلاڑی ہوں لیکن برطانوی عوام بھی اپنی حکومت سے دیانتداری کی توقع رکھتے ہیں۔’

یہ دوسرا موقع تھا جب مسٹر جاوید نے جانسن کی حکومت سے استعفیٰ دیا تھا، 2020 میں اصولی طور پر چانسلر کا عہدہ چھوڑ دیا تھا جب انہیں بتایا گیا تھا کہ وہ اپنے خصوصی مشیروں کا انتخاب نہیں کر سکتے۔

باغی جوڑے کے استعفیٰ کے خطوط کا جواب خود سے دے کر بورس نے اپنی خاموشی توڑ دی بورس جانسن نے ساجد جاوید کو بتایا کہ انہیں صحت کے سیکریٹری کے طور پر اپنا استعفیٰ خط موصول ہونے پر ‘افسوس’ ہے اور تجویز کیا کہ ان کی حکومت NHS کے لیے منصوبے ‘ڈیلیور کرنا جاری رکھے گی’۔

ایک مختصر خط میں، وزیر اعظم نے لکھا: ‘محترم ساجد، آج شام آپ کا استعفیٰ پیش کرنے والے خط کے لیے آپ کا شکریہ۔ مجھے اسے حاصل کرنے پر بہت افسوس ہوا ‘آپ نے اس حکومت اور برطانیہ کے لوگوں کی امتیازی خدمت کی ہے۔’

بورس جانسن نے رشی سنک کی بطور چانسلر رخصتی پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انہیں مسٹر سنک کا استعفیٰ خط موصول ہونے اور ان کی ‘شاندار خدمات’ کی تعریف کرنے پر ‘افسوس’ ہے۔

ایک خط میں، وزیر اعظم نے لکھا: ‘پیارے رشی، مجھے حکومت سے استعفی دینے کا آپ کا خط موصول ہونے پر افسوس ہوا ‘آپ نے امن کے زمانے کی تاریخ میں ہماری معیشت کے لیے سب سے مشکل دور میں ملک کو شاندار خدمات فراہم کی ہیں’۔

دوہرے استعفیٰ نے قیاس آرائیوں کو جنم دیا کہ کابینہ کے دیگر اراکین جلد ہی مسٹر جانسن کی حکومت کو چھوڑنے کے لیے اس کی پیروی کر سکتے ہیں۔

روس ، یوکرین تنازعہ:جنگ عظیم دوم کے پہلی مرتبہ جرمنی کا تجارتی خسارہ 3کھرب روپے تک…

لیکن مسٹر راب، مسٹر والیس، محترمہ پٹیل اور محترمہ ٹرس نے اشارہ کیا ہے کہ وہ واک آؤٹ نہیں کر رہے ہیں جبکہ سیکرٹری ماحولیات جارج یوسٹیس نے ابھی تک اپنی خاموشی نہیں توڑی ہے۔

کنزرویٹو ایم پی ثاقب بھٹی نے بھی پارٹی سے استعفیٰ دے دیا ہے ٹویٹر پر اپنا استعفیٰ پوسٹ کرتے ہوئے انہوں نے لکھا: ‘کنزرویٹو اور یونین پارٹی ہمیشہ دیانت اور عزت کی جماعت رہی ہےمیں محسوس کرتا ہوں کہ عوامی زندگی میں معیارات انتہائی اہمیت کے حامل ہیں، اور گزشتہ چند مہینوں کے واقعات نے ہم سب پر عوام کے اعتماد کو مجروح کیا ہے میں کچھ عرصے سے ان مسائل سے دوچار ہوں اور میرا ضمیر مجھے اس انتظامیہ کی حمایت جاری رکھنے کی اجازت نہیں دے گا اس وجہ سے مجھے اپنا استعفیٰ دینا پڑے گا۔’

وزیر اعظم کو ایک اور سخت دھچکا لگا جب ان کے ایک انتہائی وفادار حامی مسٹر گلس نے کہا کہ وہ ‘بھاری دل کے ساتھ’ استعفیٰ دے رہے ہیں انہوں نے لکھا: ‘میں اپنی پوری بالغ زندگی کنزرویٹو پارٹی کا رکن رہا ہوں، ایک ایسی پارٹی جو میرے خیال میں سب کے لیے مواقع کی نمائندگی کرتی ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ بہت عرصے سے ہم اس ملک کے لوگوں کے لیے ڈیلیور کرنے کے بجائے اپنی ساکھ کو پہنچنے والے نقصان سے نمٹنے پر زیادہ توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں،’یہی وجہ ہے کہ میں اب آپ کی حکومت کا حصہ نہیں رہ سکتا۔’

کنزرویٹو ایم پی نکولا رچرڈز محکمہ ٹرانسپورٹ میں پی پی ایس کے طور پراپنے عہدے سے مستعفیٰ پو گئے، یہ کہتے ہوئے کہ وہ ‘موجودہ حالات میں’ خدمات انجام نہیں دے سکتیں۔

82 ملین ٹن تیل:روس کی موجیں ہوگئیں

ویسٹ برومویچ ایسٹ کے ایم پی نے ٹویٹ کیا: ‘ایک ایسے وقت میں جہاں میرے حلقے زندگی گزارنے کے اخراجات سے پریشان ہیں اور میں ان کی مدد کرنے کی پوری کوشش کر رہا ہوں، میں موجودہ حالات میں خود کو پی پی ایس کے طور پر کام کرنے کے لیے نہیں لا سکتا، جہاں توجہ کم ہے۔ ناقص فیصلے جس سے میں وابستہ نہیں ہونا چاہتا میں اپنے حلقوں کے ساتھ وفادار ہوں اور انہیں ہمیشہ اولیت دوں گا میں کنزرویٹو پارٹی کا بھی وفادار ہوں، جن میں سے فی الحال میرے لیے ناقابل شناخت ہے۔ مجھے یقین ہے کہ کچھ بدلنا چاہیے۔

چیلٹنہم کے ایم پی ایلکس چاک نے بھی منگل کی شام سالیسٹر جنرل کے عہدے سے استعفیٰ دینے کی تصدیق کی بورس جانسن کو لکھے گئے خط میں مسٹر چاک نے کہا کہ یہ ‘انتہائی دکھ کے ساتھ’ ہے کہ وہ عہدہ چھوڑ رہے ہیں لیکن انہوں نے مزید کہا کہ وہ ‘ناقابل دفاع’ کا دفاع نہیں کر سکتےحکومت میں رہنا مشکل یا غیر مقبول پالیسی عہدوں کے لیے بحث کرنے کا فرض قبول کرنا ہے جہاں یہ وسیع تر قومی مفاد کو پورا کرتا ہے۔ لیکن یہ ناقابل دفاع کے دفاع تک نہیں بڑھ سکتا۔

‘اوون پیٹرسن کی شکست، پارٹی گیٹ اور اب سابق ڈپٹی چیف وہپ کے استعفیٰ کو سنبھالنے کا مجموعی اثر یہ ہے کہ برطانوی حکومت کی جانب سے توقع کی گئی صاف گوئی کے معیار کو برقرار رکھنے کے لیے نمبر 10 کی اہلیت پر عوام کا اعتماد ناقابل تلافی طور پر ٹوٹ گیا ہے۔ مجھے افسوس ہے کہ میں اس فیصلے کا اشتراک کرتا ہوں۔

‘یہ ہمارے ملک کے لیے ایک شدید چیلنج کے لمحے میں آیا ہے، جب حکومت پر بھروسہ شاید ہی زیادہ اہم ہو سکے۔ مجھے ڈر ہے کہ اب نئی قیادت کا وقت آگیا ہے۔’

مسجد الحرام میں دنیا کا سب سے بڑا کولنگ سسٹم نصب

ٹوری ایم پی برائے ہیسٹنگز اور رائی سیلی این ہارٹ، جنہوں نے پہلے مسٹر جانسن کو گزشتہ ماہ اعتماد کے ووٹ کی حمایت کی تھی، نے کہا کہ وہ اب ان کی حمایت کرنے کے قابل نہیں ہیں۔

انہوں نے ٹویٹ کیا: ‘مزید انکشافات کو دیکھتے ہوئے جو سامنے آئے ہیں، اور یہ دیکھتے ہوئے کہ پارلیمنٹ کی سالمیت کو برقرار رکھا جانا چاہیے، ہیسٹنگز اور رائی کے اپنے حلقوں کی جانب سے میں اب بورس جانسن کی کنزرویٹو پارٹی کے رہنما کے طور پر حمایت کرنے کے قابل نہیں ہوں -‘

دوسری جانب وزیر اعظم نے تسلیم کیا کہ انہیں مسٹر پنچر کو برطرف کر دینا چاہیے تھا جب انہیں 2019 میں وزارت خارجہ ہونے پر ان کے خلاف دعووں کے بارے میں بتایا گیا تھا، لیکن اس کے بجائے مسٹر جانسن نے انہیں دیگر حکومتی کرداروں پر مقرر کیا۔

یہ پوچھے جانے پر کہ کیا یہ ایک غلطی تھی،بورس جانسن نے کہا: ‘میرے خیال میں یہ ایک غلطی تھی اور میں اس کے لیے معذرت خواہ ہوں۔ پچھلی نظر میں یہ کرنا غلط کام تھا۔

‘میں ہر اس شخص سے معذرت خواہ ہوں جو اس سے بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ میں بالکل واضح کرنا چاہتا ہوں کہ اس حکومت میں کسی ایسے شخص کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے جو شکاری ہے یا جو اپنے اقتدار کا غلط استعمال کرتا ہے۔’

70 برس قبل لی گئی مسجد الحرام کی پہلی رنگین تصویر جاری

مسٹر ریزموگ نے ​​کہا کہ ‘چانسلروں کو کھونا کچھ ایسا ہوتا ہے انہوں نے اسکائی نیوز کو بتایا کہ اس طرح کے اقدامات سے وزیر اعظم کے استعفیٰ کی تجویز پیش کرنا کابینہ کی حکومت کا ’18ویں صدی’ کا نظریہ تھا۔

انہوں نے کہا کہ یہ وزیر اعظم ہیں جو کابینہ کے وزراء کی تقرری کرتے ہیں اور ‘وہ ایسا نہیں ہے جسے کابینہ کے وزرا نے نیچے لایا ہو’۔

سر کیر سٹارمر نے فوری انتخابات کا مطالبہ کیا انہوں نے کہا وہ وزیراعظم بننے کے لیے نااہل ہیں۔ وہ ملک پر حکومت کرنے کے قابل نہیں ہے ۔

‘یہ کنزرویٹو پارٹی کے بہت سے لوگوں کے ذہن میں آ رہا ہے، لیکن انہیں اس پر غور کرنا ہوگا، کہ انہوں نے مہینوں، تک اس کی حمایت کی ہے آج مستعفی ہونے کا مطلب ان تمام مہینوں میں ان کی مداخلت کے خلاف کوئی نہیں ہے جب انہیں اسے اس کے لیے دیکھنا چاہیے تھا، وہ جانتے تھے کہ وہ کون ہے ہمیں حکومت کی تبدیلی کی ضرورت ہے۔’

الجزیرہ کی خاتون صحافی پر فائرنگ غیر ارادی طور پر ہوئی، امریکا

یہ پوچھے جانے پر کہ کیا وہ انتخابات کی حمایت کریں گے اگر اگلے چند ہفتوں میں کسی کو بلایا جائے تو سر کیر نے کہا: ‘ہاں۔ ہمیں برطانیہ کے لیے ایک نئی شروعات کی ضرورت ہے۔ ہمیں حکومت کی تبدیلی کی ضرورت ہے۔’

لیبر لیڈر نے یہ بھی تجویز کیا کہ حکومت کی تبدیلی سے ‘بڑے مسائل’ جیسے قیمتی زندگی کے بحران کو حل کرنے میں مدد ملے گی اور ‘سیاسی استحکام’ مل سکتا ہے۔

لیبر لیڈر نے کہا کہ جو لوگ کابینہ میں رہ گئے ہیں اگر وہ استعفیٰ نہیں دیتے تو وہ وفادار نہیں ہیں رشی سنک کے استعفیٰ کی خبر بریک ہونے سے کچھ دیر پہلے سر کیر نے صحافیوں سے بات کی۔ یہ پوچھے جانے پر کہ کیا مسٹر جانسن ‘پیتھولوجیکل جھوٹا’ تھا، اس نے کہا: ‘ہاں، وہ جھوٹا ہے وہ جانتے ہیں کہ وہ کیسا ہے وہ نفسیاتی طور پر تبدیل کرنے کے قابل نہیں ہے، اور اس لیے انہیں وہی کرنا ہوگا جو قومی مفاد میں ہو اور اسے ہٹانا پڑے۔’

گندم کاعالمی بحران خطرناک صورتحال اختیارکرگیا،چند ممالک میں بھوک بڑھنےکاخدشہ