بنگلہ دیش نے موسمیاتی تبدیلی سے نمٹنے کیلئے بین الاقوامی اتحاد قائم کرلیا

یہ باہمی تعاون کمزور کمیونٹیز پر موسمیاتی تبدیلی کے اثرات سے نمٹنے کے لیے بنگلہ دیش کی کوششوں کو تقویت دے گا۔
0
120
pakistan

دبئی: بنگلہ دیش نے موسمیاتی تبدیلی سے نمٹنے کیلئے بین الاقوامی اتحاد قائم کرلیا ہے-

باغی ٹی وی: عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کا کہنا ہے کہ بنگلہ دیش، مختلف بین الاقوامی عالمی شراکت داروں کے ساتھ مل کر موسمیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کیلئے موجود ملکی صلاحیت کو مضبوط بنانے کے لیے بنگلہ دیش کلائمیٹ اینڈ ڈیولپمنٹ پلیٹ فارم (BCDP) کا آغاز کر رہا ہے۔

اس تعاون میں ایشیائی ترقیاتی بینک، عالمی بینک، بین الاقوامی مالیاتی کارپوریشن، کثیر الجہتی سرمایہ کاری کی گارنٹی ایجنسی، ایشین انفراسٹرکچر انویسٹمنٹ بینک، فرانسیسی ترقیاتی ایجنسی ”Française de Développement“، یورپی یونین، گرین کلائمیٹ فنڈ، حکومت جنوبی کوریا، جاپان انٹرنیشنل کوآپریشن ایجنسی، اور برطانیہ شامل ہیں، جس کا مقصد موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات کو کم کرنے اور ان کے مطابق ڈھالنے کی قوم کی صلاحیت کو بڑھانا ہے یہ باہمی تعاون کمزور کمیونٹیز پر موسمیاتی تبدیلی کے اثرات سے نمٹنے کے لیے بنگلہ دیش کی کوششوں کو تقویت دے گا۔

سفارتی سطح پر پاکستان کی بھارت کو بڑی شکست

ایشیا میں اپنی نوعیت کی یہ پہلی شراکت داری جنوری 2023 میں بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) کی طرف سےمنظور شدہ 1.4 بلین ڈالر کی لچک اور پائیداری کی سہولت کےساتھ،عالمی بینک کیجانب سے گرین اینڈ کلائمیٹ ریسیلینٹ ڈویلپمنٹ پالیسی کریڈٹس اور ایشیائی ترقیاتی بینک کی جانب سے جاری موسمیاتی منصوبے کی فنڈنگ کے ساتھ ہم آہنگ ہے۔

اس شراکت داری کا مقصد ماحولیاتی تحفظات کو عوامی منصوبہ بندی، مقامی ماحولیاتی اقدامات کو فروغ دینا، تباہی کے خطرات کی مالی امداد کو بڑھانا، فضائی آلودگی سے نمٹنا اور گرین بانڈ کی مالی اعانت کے لیے پالیسیوں کو اپ ڈیٹ کرنا ہےاس تعاون کے کلیدی اجزاء میں بنگلہ دیش کے موسمیاتی ایجنڈے کو نافذ کرنے کے لیے بی سی ڈی پی کی تشکیل، پراجیکٹ کی تیاری کیلئے فیسلیٹی کا قیام، اور پالیسی پر مبنی قرض دینا شامل ہیں۔

نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ: شاداب خان انجری کا شکار

عالمی بینک سبز اور موسمیاتی لچکدار ترقی کے لیے 1 بلین ڈالر کا تعاون کر رہا ہے، جبکہ یورپی یونین اور یورپی انویسٹمنٹ بینک نے بنگلہ دیش کو قابل تجدید توانائی کی سہولت کی یقین دہانی کرائی ہے۔ دونوں ادارے 381.5 ملین ڈالر کے قرض کے ساتھ قابل تجدید توانائی کے منصوبوں کی حمایت کر رہے ہیں۔

دیگر تنظیمیں جیسے Agence Française de Développement، JICA، UNDP، اور نجی شعبے بھی اس کوشش میں بڑھ چڑھ کر حصہ لے رہے ہیں اس تعاون کو مالیاتی منصوبہ بندی کو بہتر بنانے، موسمیاتی خطرے کے انتظام کو بڑھانے اور بنگلہ دیش کی طرف اضافی موسمیاتی مالیات کو راغب کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے-

زندہ رہنے کی یہ ترکیب نکالی میں نے ،اپنے ہونے کی خبر سب سے چھپالی …

بین وزارتی اور انٹر ایجنسی کوآرڈینیشن۔ بنگلہ دیش موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات کے لیے سب سے زیادہ خطرے سے دوچار ممالک میں سے ایک ہے اور موسمیاتی تبدیلیوں کی موافقت اور آفات کے خطرے سے متعلق تیاری میں پیش پیش رہا ہے۔ حکومتی تال میل کو بڑھانے کے لیے، ماحولیات، جنگلات اور موسمیاتی تبدیلی کی وزارت (MoEFCC) نے وزیر اعظم کی سربراہی میں ایک بین وزارتی پلیٹ فارم کے طور پر قومی کمیٹی برائے ماحولیات اور موسمیاتی تبدیلی (NCECC) تشکیل دی ہے۔ این سی ای سی سی قومی آب و ہوا کی حکمت عملیوں کے نفاذ کی پیشرفت کی نگرانی کرے گا، حکمت عملیوں پر عمل درآمد کے لیے مسائل کے بارے میں رہنمائی اور حل فراہم کرے گا اور ماحولیاتی تبدیلی پر اقوام متحدہ کی کانفرنسوں میں کیے گئے فیصلوں پر عمل درآمد پر غور کرے گا۔

ہماری زمین سے 13 گنا بڑا سیارہ، جس نے سائنسدانوں کو چکرا کر رکھ …

Leave a reply