شمسی توانائی کے ذریعے 2023 تک 9.5 گیگا واٹ تک بجلی حا صل کی جائے گی

0
62

ریاض :شمسی توانائی کے ذریعے 2023 تک 9.5 گیگا واٹ تک بجلی حا صل کی جائے گی ،اطلاعات کےمطابق محکمہ شماریات کے مطابق 2019ء کے دوران سعودی عرب کے 1.6 فیصد گھر شمسی توانائی استعمال کرنے لگ گئے ہیں۔

عالمی حالات میں تغیروتبدل ، سونے اور خام تیل کی قیمتیں گر گئیں

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق محکمہ شماریات نے تجدد پذیر توانائی کے استعمال سے متعلق اعدادوشمار جاری کرکے یہ بتایا ہے کہ سب سے زیادہ شمسی توانائی حائل میں استعمال ہورہی ہے۔ وہاں 2.3 فیصد گھرانے شمسی توانائی سے کام لے رہے ہیں۔

ٹرین سے شیرخوار بچہ اغوا کرنے والے میاں بیوی کون نکلے ؟ اہم رپورٹ نے کھلبلی مچادی

سعودی عرب میں مشرقی ریجن شمسی توانائی کے حوالے سے دوسرے نمبر پر ہے۔ وہاں اس کے استعمال کی شرح 2.1 فیصد ہے۔ باحہ کے گھروں میں شمسی توانائی کا استعمال سب سے کم ہے۔ وہاں اعشاریہ79 فیصد ہے۔

83 ہزار 5 سو ڈالر میں مارخور کا شکار، مارخور ہی کا شکارکیوں؟ اہم وجہ سامنے آگئی

واضح رہے کہ مملکت میں تجدد پذیر توانائی کا قومی پروگرام اپنے اہداف متعین کئے ہوئے ہے۔ پروگرام یہ ہے کہ 2020ء تک مملکت میں شمسی توانائی کا استعمال 3.45 گیگا واٹ تک پہنچ جائے گا یا یہ مملکت میں توانائی کی کل پیداوار کا 4 فیصد ہوجائے گا۔

بڑی شان سے بڑی آن سے :پرتگال میں‌ پانچ سو سال بعد مسجد کی بنیاد رکھی گئی!

2023ءمیں 9.5 گیگا واٹ یعنی کل پیداوار کا 10فیصد ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ توقع یہ ہے کہ شمسی توانائی کے منصوبوں میں سرمایہ کاری کا حجم 59 ملین ریال تک پہنچ جائے گا۔اعدادوشمار سے پتہ چلا ہے کہ سعودی عرب کے 52فیصد سے زیادہ خاندان گھروں میں شمسی توانائی استعمال کرنے کے خواہشمند ہیں۔بین الاقوامی توانائی ایجنسی کی ایک نئی رپورٹ کے مطابق ، سمندر میں ہوا سے چلنے والے فارموں سے ہی دنیا کی ضرورت سے زیادہ بجلی پیدا ہوسکتی ہے۔

"مشرق وسطی پرمنڈلاتے جنگ کے نئے بادل "ترک وزیر خارجہ آج عراق جائیں گے

2018 میں دنیا نے ایک ریکارڈ شامل کیا لیکن اس کے باوجود کم تعداد میں 108 گیگا واٹ شمسی توانائی ، اور 50 جی ڈبلیو ہوا سے چلنے والی – ایک چھوٹی لیکن اہم شروعات ہے۔2018 میں صرف 12.9 عالمی بجلی ہوا یا شمسی ٹیکنالوجی کے ذریعہ تیار کی گئی تھی اور ، یو این ای پی کا کہنا ہے کہ ، “قابل تجدید ذرائع کو چھ گنا تیزی سے بڑھنے کی ضرورت ہے۔”

فوجی ہیلی کاپٹر گر کر تباہ، 2 پائلٹ ہلاک

مشرق وسطی کے مقابلے میں کہیں زیادہ حقیقت پسندانہ نہیں ، جہاں ہوا اور سورج کی روشنی کی کافی سپلائی کے باوجود ، 2018 میں صرف 0.3 فیصد توانائی قابل تجدید ذرائع سے حاصل ہوئی ، جبکہ ایشیاء پیسیفک کے خطے میں 40.2 فیصد ، یوروپ میں 30.7 فیصد اور شمالی امریکہ میں 21.2 فیصد۔خیال رہے کہ 2018 میں سعودی عرب نے ونڈ پاور سے بالکل ٹھیک بجلی پیدا نہیں کی اور صرف شمسی توانائی سے صرف 0.2TWh بجلی کی پیداوار حاصل کی۔

حکومت نے سود اداکرنے کے لیے کتنے ارب روپے قرض لیا؟ رپورٹ جاری

2016 میں سعودی عرب کے وژن 2030 میں ترقی کا خاکہ تسلیم کیا گیا تھا کہ “شمسی اور ہوا سے بجلی پیدا کرنے کے لئے مملکت کی متاثر کن قدرتی صلاحیت بڑی حد تک لاپرواہی نہیں ہے” اور اس نے 2030 تک 9.5GW قابل تجدید توانائی پیدا کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

Leave a reply