اسرائیل پر حماس کے حملے کا ماسٹر مائنڈ،ایک پراسرارشخصیت،میڈیا کو تصویر کی تلاش

اب تک اسرائیلی حملوں میں 11 صحافی مارے جا چکے ہیں
0
231

سات اکتوبر کو حماس نے اسرائیل پر حملہ کیا، جس کے جواب میں اسرائیل کے حملے ابھی تک جاری ہیں، 26 سو سے زائد اموات غزہ میں ہوچکی ہیں، اسرائیل پر حملے کا ماسٹر مائنڈ کون تھا؟ اس حوالہ سے کہا جا رہا ہے ماسٹر مائنڈ "محمد الضیف” ہے جس کی ابھی تک کوئی تصویر سامنے نہیں آ سکی.

محمد الضیف حماس کی عسکری ونگ کی قیادت کر رہے ہیں، حماس کے اسرائیل پر حملے کا ماسٹر مائنڈ انہی کو مانا جا رہاہے، محمد الضیف کی چند تصاویر موجود ہیں مگر واضح کوئی بھی نہیں،ایک سایہ دار تصویر ہے جو کبھی کبھار احتجاجی مظاہروں میں شرکاء کتبوں پر بناکر اٹھاتے ہیں،

امریکی محکمہ خارجہ کے مطابق، محمد الضیف غزہ کی پٹی میں حماس کے عسکری ونگ کے اعلیٰ کمانڈر ہیں، جس کو القسام بریگیڈز کے نام سے جانا جاتا ہے۔2015 میں، امریکی حکومت نے الضیف کو ایک عالمی دہشت گرد کے طور پر نامزد کیا، اسے خودکش حملہ آوروں کی تعیناتی اور اسرائیلی فوجیوں کو اغوا کرنے کا ذمہ دار ٹھہرایا۔ محکمہ خارجہ نے کہا کہ 2014 میں غزہ جنگ کے دوران الضیف نے حماس کی جارحانہ حکمت عملی کی قیادت کی۔

حماس کے حملوں میں ان کے اہم کردار کے باوجود،الضیف ایک پرکشش شخصیت بنی ہوئی ہے۔ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق،الضیف کہاں رہتے ہیں اس بارے میں کسی کو معلوم نہیں ،وہ عوام کے سامنے نہیں آتے، واشنگٹن پوسٹ کے مطابق آیا محمد الضیف اصلی نام ہے بھی سہی یا نہیں، اسکی بھی تصدیق نہیں ہو سکی

رائٹرز کے مطابق، الضیف کی صرف چند تصاویر موجود ہیں،یہ تصویر اس سے قبل اگست 2014 میں ایک مظاہرے کے دوران استعمال کی گئی تھی، جس میں اسرائیلی افواج کے خلاف لڑنے والے حماس کے عسکریت پسندوں کی حمایت ظاہر کی گئی تھی۔

ہفتے کے روز، حماس کے ایک ٹی وی چینل نے اعلان کیا کہ محمد الضیف ایک بیان جاری کرے گا، جس میں فلسطینیوں کو اشارہ دیا جائے گا کہ کچھ اہم ہونے والا ہے۔محمد الضیف کا بیان آڈیو ٹیپ پر چلایا گیا اور نشر پر پہلے سے ریکارڈ کیا گیا تھا۔ریکارڈنگ میں محمد الضیف نے کہا کہ یہ حملے فلسطینیوں کے خلاف اسرائیل کی کارروائیوں کا ردعمل ہیں، حماس کے آپریشن کو "آپریشن القصیٰ طوفان” کہتے ہیں۔نیویارک ٹائمز کے مطابق، الضیف نے آڈیو ریکارڈنگ میں کہا، "عسکریت پسندو، یہ آپ کا اس مجرم دشمن کو دفن کرنے کا دن ہے۔ اس کا وقت ختم ہو گیا ہے۔ جہاں بھی آپ انہیں پائیں انہیں مار ڈالو”۔ "اس گندگی کو اپنی سرزمین اور اپنے مقدس مقامات سے ہٹا دو۔ لڑو ان سے،

حماس کے ایک ذریعے نے رائٹرز کو بتایا کہ غزہ میں محمد الضیف کے ساتھ حماس کے ایک اور رہنما یحییٰ سنوار نے اسرائیل پر حملے کی تیاری کا کہا تھا۔ تاہم، الضیف اس آپریشن کا "ماسٹر مائنڈ” تھا،

وائرل ویڈیو،حماس کے ہاتھوں گاڑی میں بندھی یرغمال لڑکی کون؟

اسرائیل کی طرف سے عالمی قوانین کی خلاف ورزی جاری ہے. فلسطینی صحافی

بھارت کا اسرائیل میں مقیم بھارتیوں کو واپس لانے کے لئے آپریشن اجئے کا اعلان

 پرتشدد کارروائیوں کو فوری طور پر روکنے اور شہریوں کے تحفظ کا مطالبہ 

اسرائیلی میجر جنرل حماس کے ہاتھوں یرغمال؛ کیا اب فلسطینی قیدی چھڑوائے جاسکیں گے؟

اسرائیل پر حملہ کی اصل کہانی مبشر لقمان کی زبانی

حماس کا وجود مٹانا ہو گا،تاہم غزہ پر اسرائیلی قبضہ غلطی ہو گی،امریکی صدر

غزہ میں فلسطینی وزارت صحت کے بیان کے مطابق اسرائیلی حملوں میں شہید ہونے والوں کی تعداد 2670 ہو گئی ہے،حملوں میں نو ہزار چھ سو کے قریب افراد زخمی ہوئے ہیں، غزہ میں اسرائیلی حملوں میں 730 بچے بھی شہید ہوئے ہیں،

اسرائیل کی غزہ پر بمباری سے 11 صحافیوں کی بھی موت ہوئی ہے، فلسطین جرنلسٹ سینڈیکیٹ نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ اب تک اسرائیلی حملوں میں 11 صحافی مارے جا چکے ہیں،صحافیوں کو فرائض کی ادائیگی کے دوران مشکلات کا سامنا ہے

Leave a reply