پاکستان 2075 تک دنیا کی چھٹی بڑی معیشت بن جائے گا،امریکی سرمایہ کاری بینک گولڈ مین ساکس کی پیشگوئی

0
79

امریکی سرمایہ کاری بینک گولڈ مین ساکس نے اپنی رپورٹ میں پاکستان کے معاشی مستقبل کی پیشگوئی کی ہے۔

باغی ٹی وی : نجی خبررساں ادارے ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق منگل کو گولڈمین ساکس کی طرف سے شائع ہونے والے ایک تحقیقی مقالے میں پیش گوئی کی گئی ہے کہ "مناسب پالیسیوں اور اداروں” کی جگہ پر پاکستان 2075 تک دنیا کی چھٹی بڑی معیشت بن جائے گا۔

امریکا نے شیریں ابو عاقلہ قتل کیس بین الاقوامی جرائم کی عدالت لے جانے کی مخالفت کر دی

ماہر معاشیات کیون ڈیلی اور ٹاڈاس گیڈمیناس کے تصنیف اور ‘2075 کا راستہ’ کے عنوان سے اس مقالے میں پیش گوئی کی گئی ہے کہ 2075 تک پانچ بڑی معیشتیں چین، ہندوستان، امریکہ، انڈونیشیا اور نائیجیریا ہوں گی۔

گولڈمین ساکس اب تقریباً دو دہائیوں سے ممالک کی طویل مدتی نمو کا تخمینہ لگا رہا ہے، جس کا آغاز BRICs کی معیشتوں سے ہوا لیکن بعد میں اس نے 70 ابھرتی ہوئی اور ترقی یافتہ معیشتوں کا احاطہ کیا۔

ان کا تازہ ترین مقالہ 104 ممالک پر محیط ہے جس کے تخمینے 2075 تک ہیں۔

رپورٹ میں پاکستان کی معاشی ترقی کا تخمینہ آبادی میں اضافے کی بنیاد پر لگایا گیا ہےرپورٹ میں یہ پیش گوئی بھی کی گئی ہے کہ 2075 تک پاکستان کی مجموعی داخلی پیداوار 12.7 کھرب ڈالر ہوجائے گی۔

گولڈمین ساکس کے مطابق، پاکستان کے مستقبل کے ستارے کی حیثیت کا اندازہ اس کی آبادی میں اضافے کی وجہ سے لگایا گیا ہے، جو مصر اور نائیجیریا کے ساتھ مل کر اسے اگلے 50 سالوں میں دنیا کی سب سے بڑی معیشتوں میں شامل کر سکتا ہے۔

چینی صدرتین روزہ دورے پر سعودی عرب پہنچ گئے

اس وقت تک، تحقیق کے مطابق پاکستان کی حقیقی جی ڈی پی بڑھ کر 12.7 ٹریلین ڈالر اور اس کی فی کس جی ڈی پی 27,100 ڈالر ہو جائے گی۔

تاہم، یہ تعداد چین، بھارت اور امریکہ کے حجم کے ایک تہائی سے بھی کم ہونے کا امکان ہے۔ 2075 میں ہندوستان کی حقیقی جی ڈی پی $52.5 ٹریلین اور فی کس جی ڈی پی $31,300 متوقع ہے۔

اپنے تخمینوں کے لیے اہم خطرات میں سے، ماہرین اقتصادیات خاص طور پر "ماحولیاتی تباہی” اور "عوامی قوم پرستی” کو نمایاں کرتے ہیں۔

جب تک عالمی سطح پر مربوط ردعمل کے ذریعے پائیدار ترقی کے راستے کو یقینی نہیں بنایا جاتا، موسمیاتی تبدیلی ان تخمینوں کو بہت زیادہ متاثر کر سکتی ہے، خاص طور پر پاکستان جیسے ممالک کے لیے، جن کے جغرافیے خاص طور پر کمزور ہیں۔

بہت سے ممالک میں پاپولسٹ قوم پرستوں کے اقتدار میں آنے کے ساتھ، رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس سے تحفظ پسندی میں اضافہ ہو سکتا ہے جس کے نتیجے میں ممکنہ طور پر عالمگیریت کی تبدیلی ہو سکتی ہے، اس طرح تمام ممالک میں آمدنی میں عدم مساوات میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

مقالے میں کہا گیا ہے کہ عالمی ترقی زوال کے راستے پر ہے عالمی نمو گزشتہ 10 سالوں میں اوسطاً 3.6 فیصد سالانہ سے کم ہو کر 3.2 فیصد ہو گئی ہے، اور سست روی نسبتاً وسیع البنیاد رہی ہے ان کا اندازہ ہے کہ 2024 اور 2029 کے درمیان عالمی نمو اوسطاً 2.8 فیصد رہے گی اور یہ بتدریج زوال پذیر ہو گی۔

جرمن سکیورٹی فورسز نے بغاوت اورریاستی اداروں پر حملے کرنےکا منصوبہ ناکام بنادیا

ابھرتی ہوئی مارکیٹیں عروج پر ہیں جب کہ عالمی نمو کم ہو رہی ہے، ابھرتی ہوئی معیشتیں ترقی یافتہ منڈیوں کے مقابلے میں تیزی سے ترقی کر رہی ہیں اور ان کے ساتھ ملنا جاری رکھیں گی۔

"عالمی جی ڈی پی کا وزن اگلے 30 سالوں میں ایشیا کی طرف (اور بھی) زیادہ منتقل ہو جائے گا کیونکہ چین، امریکہ، ہندوستان، انڈونیشیا اور جرمنی جب ڈالر میں ماپا جائے تو سب سے بڑی معیشتوں کے لیگ ٹیبل میں سرفہرست ہیں۔ نائیجیریا، پاکستان اور مصر بھی بڑے ممالک میں شامل ہو سکتے ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ عالمی نمو میں کمی آبادی میں کمی کی وجہ سے ہوگی، جس کا اقوام متحدہ کے اندازوں کے مطابق 2075 تک صفر کے قریب گر جائے گا۔ مقالے میں کہا گیا ہے کہ یہ ایک "اچھا مسئلہ” ہے کیونکہ اس سے ماحولیات کو پہنچنے والے نقصانات کو کم کیا جا سکتا ہے-

امریکہ پچھلی دہائی سے اپنی مضبوط کارکردگی کو دہرانے کے قابل نہیں ہو گا، ممکنہ ترقی بڑی ترقی پذیر معیشتوں کے مقابلے میں "نمایاں طور پر کم” رہ گئی ہے اگلے 10 سالوں میں امریکی ڈالر کے بھی کمزور ہونے کا امکان ہے۔

فیفا ورلڈکپ میں مراکشی کھلاڑیوں نے فتح کے بعد فلسطین کا جھنڈا لہرا دیا

مقالے میں کہا گیا کہ ابھرتی ہوئی منڈیوں کے ہم آہنگی کی وجہ سے معیشتوں کے درمیان آمدنی میں عدم مساوات میں کمی آئی ہے لیکن زیادہ تر معیشتوں میں آمدنی کی عدم مساوات میں اضافہ ہوا ہے۔ یہ عالمگیریت کے مستقبل کے لیے ایک بڑا چیلنج ہے۔

Leave a reply