روس جنگی جرائم میں ملوث ہے:سخت سزا کیلیےتیاررہے:امریکہ

0
48

واشنگٹن : روس جنگی جرائم میں ملوث ہے:سخت سزا کیلیےتیاررہے:اطلاعات کے مطابق امریکی وزیر نے کہا ہے کہ آج میں یہ اعلان کرسکتا ہوں کہ دستیاب معلومات کے تحت امریکی حکومت اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ روسی افواج کے ممبران نے یوکرین میں جنگی جرائم کا ارتکاب کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی وزیر کا کہنا ہے کہ یہ نتیجہ احتیاط کے ساتھ عوامی اور خفیہ ذرائع سے حاصل معلومات کو جانچنے کے بعد اخذ کیا گیا ہے۔جیسا کہ ہر مبینہ جرم پر ایک قانونی عدالت جس کا دائرہ کار اس جرم پر ہو وہ حتمی طور پر ذمہ دار ہے کہ مخصوص مقدمات میں صحتِ جرم کا تعین کرے۔

گذشتہ ہفتے امریکی صدر جو بائیڈن نے تبصرہ کرتے ہوئے روسی صدر پوتن کو جنگی مجرم قرار دیا تھا۔

روسی وزارت خارجہ کی جانب سے پیر کو جاری ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ امریکی صدر کی جانب سے ایسے بیانات اعلیٰ سرکاری عہدیدار کو زیب نہیں دیتے جس سے روس اور امریکہ کے تعلقات ختم ہونے کے دہانے پر آگئے ہیں۔

امریکی وزیر خارجہ بلنکن کا کہنا ہے کہ روسی افواج نے گھر کی عمارتیں، سکول، ہسپتال، اہم تنصیبات، سولین گاڑیوں، خریداری کے مراکزاور ایمبولینسوں کو تباہ کیا ہے جس سے ہزاروں معصوم سولین مارے گئے ہیں یا زخمی ہیں۔انہوں نے روس پر ایسی عمارتوں کو نشانہ بنانے کا الزام لگایا جو واضح طور پر شہری عمارتوں کے طور پر پہچانی جا سکتی تھیں۔

بلنکن کا مزید کہنا تھا کہ پیوٹن کی افواج نے یہی طرز عمل گروزنی، چیچنیا، الیپو اور شام میں بھی اپنایا تھا جہاں انگوں نے لوگوں کی ہمت توڑنے کے لیے شہروں میں بمباری تیز کر دی تھی۔

ہیومن رائٹس واچ کے اسلحہ ڈویژن کی سینئر ریسرچر بونی ڈوچرٹی نے گذشتہ ہفتے کانگرس میں اپنا تحریری بیان جمع کروایا ہے جس میں انھوں نے کہا ہے کہ روس نے کلسٹر بم استعمال کیے ہیں اور وسیع علاقے پر اثر کرنے والے دھماکہ خیز ہتھیار استعمال کیے جن کے یوکرین میں سولین اور سول تعمیرات پر تباہ کن اثرات پڑے ہیں۔

انہوں نے اپنے بیان میں مزید لکھا ہے کہ براہ راست اور دیر پا اثرات کے دستاویزی خاکے دیکھتے ہوئے گنجان آباد علاقوں میں وسیع علاقے پر اثر کرنے والے ہتھیاروں کا استعمال اس پریشانی کو بڑھاوا دیتا ہے کہ ایسے حملے اندھا دھند اور غیر متناسب طور پر کیے گئے جو کہ غیر قانونی تھے۔ وہ افراد جنھوں نے ایسے حملے مجرمانہ نیت سے کیے وہ جنگی جرائم کے ذمہ داری ہیں۔

Leave a reply