جنوبی کوریا کا شمالی کوریا پر بیلسٹک میزائل فائر کرنے کا الزام

0
23

سیول : جنوبی کوریا کی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ شمالی کوریا نے اتوار کے روز مشرقی سمندر میں ایک بیلسٹک میزائل داغا ہے۔

باغی ٹی وی : امریکی خبر رساں ایجنسی دی گارجئین” کے مطابق جنوبی کوریا کے دارالحکومت سیول کے جوائنٹ چیفس آف سٹاف نے مزید تفصیلات بتائے بغیر اتوار کی صبح ایک بیان میں بتایا کہ شمالی کوریا نے ایک نامعلوم بیلسٹک میزائل داغا ہے-

جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف سٹاف نے کہا کہ مغربی اندرون ملک شہر تائیچون سے داغے گئے میزائل نے شمالی کوریا کے مشرقی ساحل کے پانیوں میں اترنے سے پہلے 600 کلومیٹر (370 میل) زیادہ سے زیادہ اونچائی پر 600 کلومیٹر (370 میل) کراس کنٹری پرواز کی۔

جنوبی کوریا کی فوج نے شمالی کوریا کے میزائل تجربے کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے-

جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف اسٹاف نے ایک بیان میں کہا کہ شمالی کوریا کا بیلسٹک میزائل کا تجربہ ایک سنگین اشتعال انگیزی ہے جس سے جزیرہ نما کوریا اور بین الاقوامی برادری کے امن و سلامتی کو خطرہ ہے۔

یہ میزائل لانچ ان رپورٹس کے بعد سامنے آئی ہے جن میں کہا گیا تھا کہ پیانگ یانگ آبدوز سے لانچ کیے جانے والے بیلسٹک میزائل فائر کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔

کینیڈا میں آندھی اور طوفانی بارش،مختلف علاقوں میں ہنگامی حالت نافذ

جاپان کے ساحلی محافظ نے بھی ٹوکیو کی وزارت دفاع کی معلومات کا حوالہ دیتے ہوئے ممکنہ بیلسٹک میزائل لانچ کی تصدیق کی اور جہازوں کو خبردار رہنے کی ہدایت کی۔

کوسٹ گارڈ نے کہا کہ بحری جہاز براہ کرم نئی معلومات کے لیے چوکس رہیں اور اگر آپ کو کوئی چیز نظر آتی ہے تو براہ کرم ان کے قریب نہ جائیں بلکہ کوسٹ گارڈ کو مطلع کریں۔ جاپان کے پبلک براڈکاسٹر نے کہا کہ ’ایسا لگتا ہے کہ یہ آبجیکٹ جاپان کے خصوصی اقتصادی زون سے باہر گرا ہے۔

یو ایس انڈو پیسیفک کمانڈ نے کہا کہ لانچ سے "امریکی اہلکاروں یا علاقے یا ہمارے اتحادیوں کے لیے فوری خطرہ” نہیں تھا، لیکن پھر بھی اس نے شمالی کوریا کے غیر قانونی جوہری ہتھیاروں اور میزائل پروگراموں کے غیر مستحکم اثرات کو اجاگر کیا۔

نائجیریا: جامع مسجد پر ڈاکوؤں کا حملہ،ا5 افراد ہلاک متعدد زخمی

جمعے کے روز جوہری طاقت سے چلنے والے یو ایس ایس رونالڈ ریگن اور اس کے سٹرائیک گروپ کے جہاز جنوبی بندرگاہی شہر بوسان میں ڈوب گئے تھے جو سیول اور واشنگٹن کی جانب سے خطے میں کام کرنے والے مزید امریکی سٹریٹجک اثاثے رکھنے کی کوشش کا حصہ ہے۔ مئی میں اقتدار سنبھالنے والے جنوبی کوریا کے صدر یون سک یول نے اپنے پیشرو کے دور میں شمالی کوریا کے ساتھ برسوں کی ناکام سفارت کاری کے بعد امریکہ کے ساتھ مشترکہ فوجی مشقوں کو تیز کرنے کا عزم ظاہر کیا تھا۔

یو ایس ایس ریگن رواں ماہ جنوبی کوریا کے مشرقی ساحل پر مشترکہ مشقوں میں حصہ لے گا۔ واشنگٹن سیول کا اہم سکیورٹی اتحادی ہے اور جنوبی کوریا میں تقریباً 28 ہزار 500 فوجیوں کو شمالی کوریا سے بچانے کے لیے تعینات ہے۔

دونوں ممالک نے طویل عرصے سے مشترکہ مشقیں کی ہیں جن کے حوالے سے ان کا کہنا ہے کہ وہ خالصتاً دفاعی (مشقیں) ہیں تاہم شمالی کوریا انہیں حملے کی مشق کے طور پر دیکھتا ہے۔ جنوبی کوریا اور امریکی حکام کئی مہینوں سے خبردار کر رہے ہیں کہ شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان ایک اور جوہری تجربہ کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔

سابق جاپانی وزیراعظم کی آخری رسومات ملکہ برطانیہ سے بھی مہنگی،عوام کی شدید تنقید

Leave a reply