fbpx

پیپلز پارٹی کے ساتھ معاہدے پرکوئی پیشرفت نہیں ہوئی:وزیراعظم مداخلت کریں، وسیم اختر

کراچی :متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے رہنما وسیم اختر نےکہا ہےکہ پیپلز پارٹی کے ساتھ معاہدے پرکوئی پیش رفت نہیں ہوئی، آصف زرداری ہماری باتوں کو سنجیدہ لیں، وزیراعظم مداخلت کریں۔

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وسیم اخترکا کہنا تھا کہ سندھ حکومت کے ساتھ معاملات آگے نہیں بڑھ رہے، وزیر اعظم کو آگاہ کر دیا ہے، آصف زرداری ہماری باتوں کو سنجیدہ لیں، معاہدے پر عملدرآمد کے لیے وزیراعظم مداخلت کریں۔وسیم اختر نےکہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ شہری اور دیہی مسائل حل ہوں، آصف زرداری اور بلاول بھٹو بھی کہہ چکے ہیں کہ بلدیاتی نظام با اختیار ہو، مگر حکومت بن گئی اور سب مزےسےبیٹھ گئے لیکن معاہدے پرکوئی پیش رفت نہیں ہو رہی۔

کراچی ضمنی الیکشن ،ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزیوں پر الیکشن کمیشن کو ہوش آ گیا

نئے بلدیاتی نظام کے حوالے سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ نیا بلدیاتی ایکٹ نہیں بنتا تو حکومت کے ساتھ کسی چیز میں حصہ نہیں لیں گے، سندھ حکومت ابھی بھی اختیارات نیچے دینے میں ہچکچا رہی ہے، بلدیاتی نظام کا مسودہ بن گیا ہے تو اسے فوری طور پر قانون بنا دینا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ آج بھی آصف زرداری اور بلاول بھٹو کے وعدوں پر اعتبار ہے اور یقین ہے کہ بلدیاتی نظام کےمعاملے پر سپریم کورٹ کے احکامات پربھی مکمل عملدرآمد کیا جائےگا۔

اب ہماری جنگ سڑکوں پر ہو گی، ایم کیو ایم کا بڑا اعلان

سندھ میں بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ سندھ بھر میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں ٹرن آؤٹ کم ہے، فائرنگ ہوئی، ووٹرز خوف کا شکار ہیں ، بیلٹ پیپروں سے امیدواروں کے انتخابی نشانات غائب ہیں، الیکشن کمیشن کو اپنی کارکردگی دیکھنی چاہیے۔

ایم کیو ایم نے وفاقی کابینہ چھوڑ دی

سابق میئر کراچی کا کہنا تھا اندرون سندھ میں ڈاکو بیلٹ بکس اٹھا کرلےگئے ، سندھ کے 14 اضلاع میں دھاندلی کا بازار گرم ہے۔ پیپلز پارٹی ہماری اتحادی جماعت ہے لیکن الیکشن کمیشن کے ساتھ ان کی بھی ذمہ داری بنتی ہے۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن سے گذارش کرتے ہیں کہ سندھ میں جاری بلدیاتی انتخابات فوری روکے جائیں، الیکشن کمشنر بہت اچھے افسر ہیں، ان سے درخواست ہے کہ ووٹرز لسٹوں اورحلقہ بندیوں کو درست کردیں۔