جمال خاشقجی کے قتل کے بعد طیب اردگان کا پہلی مرتبہ دورہ سعودی عرب کا اعلان

0
42

ترکی کے صدر رجب طیب اردگان جمعرات کو سعودی عرب جائیں گے، ایک اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا، ریاض کے ناقد جمال خاشقجی کے 2018 میں استنبول کے قونصل خانے میں قتل کے بعد اپنے پہلے دورے میں سعودی عرب جارہے ہیں‌۔

یہ دو روزہ دورہ استنبول کی ایک عدالت کی جانب سے اس بہیمانہ قتل سے منسلک 26 سعودی مشتبہ افراد کی غیر حاضری میں مقدمے کی سماعت روکنے کے فیصلے کے بعد ہوا ہے، کیس کو سعودی عرب منتقل کر دیا گیا ہے۔

59 سالہ صحافی کو 2 اکتوبر 2018 کو استنبول میں سعودی قونصل خانے کے اندر ایک بہیمانہ قتل میں قتل کر دیا گیا جس نے دنیا کو ہلا کر رکھ دیا۔

ترکی نے قتل کی تحقیقات پر دباؤ ڈال کر ریاض کو ناراض کیا، جس کے بارے میں اردگان نے کہا کہ سعودی حکومت کی "اعلیٰ ترین سطح” پر حکم دیا گیا تھا۔

دو سنی علاقائی طاقتوں کے درمیان تعلقات تیزی سے بگڑ گئے اور سعودی عرب نے غیر سرکاری طور پر ترکی کی معیشت پر دباؤ ڈالنے اور ترکی کی اہم درآمدات کا بائیکاٹ کرنے کی کوشش کی۔

استنبول کے مقدمے کی سماعت ترکی میں اقتصادی بحران کے ایک نئے دور کے دوران معطل کر دی گئی تھی، جو کہ بڑھتی ہوئی مہنگائی اور موسم سرما میں سڑکوں پر ہونے والے احتجاجی مظاہروں کا شکار ہے جس نے اگلے سال ہونے والے عام انتخابات سے قبل اردگان کی مقبولیت کو نقصان پہنچایا تھا۔

ترکی اب توانائی کی دولت سے مالا مال خلیجی ممالک سے مالی امداد کا ڈھول پیٹ رہا ہے جن کے ساتھ عرب بہار کی بغاوتوں کے بعد اس کی دہائی میں اختلاف رہا ہے۔

اردگان پہلے ہی مصر اور متحدہ عرب امارات کے ساتھ تعلقات کو بہتر بنانے کی کوشش کر چکے ہیں، جس نے ترکی کے لیے ایک نئے سرمایہ کاری پیکج پر اتفاق کیا ہے۔

ایک ترک اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا کہ اردگان سے اپنے دورہ ریاض کے دوران کوئی باضابطہ اعلان کرنے کی توقع نہیں ہے۔

عہدیدار کا کہنا ہے کہ اردگان سعودی عرب کے شاہ سلمان سے ملاقات کرنے والے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ امکان ہے کہ ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان مذاکرات میں شرکت کرنے والے وفد میں شامل ہوں گے۔

 

حکومتی دباؤ مسترد:امریکا میں سابق پاکستانی سفیر ڈٹ گئے:عمران خان کے موقف کی تائید…

Leave a reply