مقبوضہ کشمیر،کشمیری سڑکوں‌ پر،عمران خان زندہ باد کے نعرے، کہا اللہ کے بعدعمران خان پر بھروسہ

وزیراعظم عمران خان کے اقوام متحدہ میں کشمیر پر خطاب کے بعد مقبوضہ کشمیر مٰں کشمیری سڑکوں پر نکل آئے، وزیراعظم عمران خان کے حق میں نعرے لگائے

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کو 55 روز ہو گئے ہیں، مسلسل کرفیو ہے،بھارتی فوج چپے چپے پر تعینات ہے، کشمیریوں کو گھروں سے نکلنے کی اجازت نہیں تا ہم وزیراعظم عمران خان کے جنرل اسمبلی میں خطاب کے بعد کشمیری گھروں سے باہر نکل آئے اور پاکستانی وزیراعظم عمران خان کے حق میں نعرے بازی کی.

مقبوضہ کشمیر کے علاقے‌ صورہ میں کشمیری نوجوانوں نے سڑکوں پر آ کر کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے لگائے، کشمیری نوجوانوں نے پاکستان کے پرچم اٹھا رکھے تھے انہوں نے وزیراعظم عمران خان کی جانب سے جنرل اسمبلی میں کشمیر کا مقدمہ پیش کرنے پر انکا شکریہ ادا کیا.

کشمیری نوجوانوں کا کہنا تھا کہ اب اللہ تعالیٰ کے بعد ہمیں پاکستانی وزیراعظم عمران خان پر بھروسہ ہے

کشمیریوں کے قاتل کے ساتھ میں بیٹھوں ،بالکل ممکن نہیں،شاہ محمود قریشی کا بھارتی ہم منصب کی تقریر کا بائیکاٹ

کشمیر پر دو ایٹمی طاقتیں آمنے سامنے آ سکتی ہیں،وزیراعظم عمران خان کا اقوام متحدہ میں خطاب

 

جنرل اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کیا مودی نے سوچا ہے کہ کشمیر سے کرفیو ہٹانے کے بعد کیا ہوگا؟ کیا وہ بھارت کی حاکمیت تسلیم کر لیں گے؟

انہوں نے کہا کہ کشمیر میں جب کرفیو ہٹا تو وہ قتل عامہ ہوگا کیوں کہ وہاں نو لاکھ فوجی تعینات ہیں، کیا کسی نے سوچا ہے کہ کشمیر میں قتل کے بعد کیا ہوگا۔کشمیر میں عوام کو جانوروں کی طرح رکھا جارہا ہے، کرفیو ہٹنے کے بعد وہاں ایک اور پلوامہ ہوگا جس کا الزام پاکستان پر لگایا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہوسکتا ہے کرفیو ہٹنے کے بعد بھارت پھر پاکستان پر حملہ کرے گا اور ایسا ہی جاری رہے گا۔اگر 8 لاکھ یہودی کیساتھ کشمیریوں جیسا سلوک ہو تو یہودی کیا سوچیں گے۔آپ دنیا کو تشدد پر اکسا رہے ہیںمیں دوہرانا چاہتا ہوں کہ کشمیریوں پر کرفیو کا رد عمل آئے گا اور اس کا الزام پاکستان پر لگے گا اور 27 فروری والی صورتحال پیدا ہوجائے گی۔

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کو مداخلت کرنی چاہیے،اگر دو ممالک میں جنگ چھڑ گئی تو کچھ بھی ہو سکتا ہے، لیکن ہم جیسے ملک کے پاس آزادی تک جنگ یا موت کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہوگا۔میں اقوام متحدہ کو بتانےآیا ہوں کہ اگرنیو کلیئر جنگ ہوئی تو اس کے اثرات سرحدوں سے باہر بھی ہوں گی۔

وزیراعظم نے مظلوموں کا مقدمہ دنیا کے سب سے بڑے فورم پررکھ دیا،فردوس عاشق اعوان

جنرل اسمبلی میں عمران خان نے 50منٹ لمبی تقریر کرکے یہ بھی ثابت کردیا کہ وہ فی البدیہ مدلل گفتگو کرسکتے ہیں،اس وقت عالمی سطح پر وزیراعظم عمران خان کی تقریر کو بہت سراہا جارہاہے ، یہ بھی معلوم ہوا کہ عمران خان کی تقریر دنیا بھر کے تمام ممالک کے کونے کونے میں سنی گئی ہے، نہ صرف پاکستان میں بلکہ امریکہ سمیت مغرب اور یورپ کے تمام ممالک میں بڑی بڑی سکرینوں پر عمران خان کا خطاب دیکھتے اور سنتے رہے ،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.