سپریم کورٹ، 16 ہزار برطرف ملازمین کیس کا مختصر تحریری فیصلہ جاری

0
36

سپریم کورٹ نے ملازمین کا مختصر تحریری فیصلہ جاری کر دیا

سپریم کورٹ نے تحریری فیصلے میں کہا کہ سیکڈ امپلائز ایکٹ 2010 آئین کے آرٹیکل 25,18,9 اور 4 کے متصادم ہے،
سیکڈ ایمپلائز ایکٹ 2010 آرٹیکل 8 کے تحت کالعدم قرار دیا جاتا ہے، سپریم کورٹ ارٹیکل 184 تھری کو آرٹیکل 187 کے اختیارکے تحت استعمال کر رہا ہے،ملازمین کی بحالی اور ترقیاں محکموں کے قواعد و ضوابط کے مطابق ہوں گی،کیس کا تفصیلی فیصلہ اور وجوہات بعد میں جاری کی جائیں گی،سیکڈ ایمپلائز ایکٹ 2010 آئین کے آرٹیکل 25،18 اور 9 کے متصادم ہے،

جسٹس منصور علی شاہ نے اختلافی نوٹ لکھا کہ پارلیمانی نظام حکومت میں پارلیمان سپریم ہے، سیکڈ ایمپلائز ایکٹ کالعدم قرار دینے کیخلاف نظرثانی اپیلوں کو منظور کیا جاتا ہے،سیکڈ ایمپلائز ایکٹ کے بعد نکالے گئے ملازمین کو تمام مراعات دی جائیں،مضبوط جمہوری نظام میں پارلیمان ہی سپریم ہوتا ہے، پارلیمنٹ کو نیچا دکھانا جمہوریت کو نیچا دکھانے کے مترادف ہے،ایکٹ آف پارلیمنٹ کی شق چار آئین سے متصادم ہے، سیکشن چار، اور سیکشن 10 آئین سے متصادم ہیں جس کا جائزہ لینا ہے،

قبل ازیں سپریم کورٹ نے 16 ہزار برطرف ملازمین سے متعلق کیس کا فیصلہ سنا دیا ،سپریم کورٹ نے سیکڈ ایمپلائز ایکٹ کالعدم قرار دینے کیخلاف نظرثانی درخواستیں مسترد کردیں ،سپریم کورٹ کا فیصلہ چار ایک کے تناسب سے آیا،جسٹس منصور علی شاہ نے اختلافی نوٹ تحریر کیا ،تحریری فیصلہ میں کہا گیا کہ کچھ ملازمین کو مدت ملازمت کے حساب سے ریلیف دیا گیا ہے،جسٹس منصور علی شاہ نے اختلافی نوٹ میں نظرثانی اپیلوں کو تسلیم کیا ہے ملازمین کو ٹینیور کے حساب سے ریلیف دیا گیا ہے، درخواست گزاروں کے وکلا کے شکر گزار ہیں جنہوں نے عدالتی معاونت کی، تفصیلی فیصلہ بعد میں جاری کیا جائے گا سپریم کورٹ کے جسٹس عمر عطا بندیال نے تحریری فیصلہ پڑھ کر سنا یا، جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ ملازمین کے ڈیٹا سے متعلق جو سوالات اٹھائے ہیں ان سے آگاہ کیا جائے،

سپریم کورٹ نے ایک سے 7گریڈ تک کے ملازمین کو بحال کر دیا گریڈ 8سے اوپر والے ملازمین کو ٹیسٹ دینا ہو گا، آرٹیکل تین 184اور 187 کے اختیار استعمال کرکے فیصلہ سنایا گیا نومبر 1996 سے اکتوبر 99 تک بھرتی ملازمین کا اگر ٹیسٹ نہیں لیا گیا تو انہیں ٹیسٹ دینا ہوگا،جن ملازمین کی مس کنڈیکٹ پر نوکری ختم ہوئی تھی وہ بحال نہیں ہونگے جن ملازمین کو گریڈ ایک سے اوپر ترقی دے کر بحال کیا گیا وہ واپس اپنے گریڈ پر جائینگے سپریم کورٹ نے 16 ہزار برطرف ملازمین کو بحال کردیا،ملازمین کی نظرثانی اپیلیں خارج کر دی گئیں سپریم کورٹ نے درخواستیں 4ایک کے تناسب سے خارج کی

فیصلہ سنائے جانے سے قبل سپریم کورٹ کے باہر برطرف ملازمین کی بڑی تعداد جمع ہوگئی تھی مردو خواتین ملازمین نے فیصلہ آنے سے پہلے دعائیں شروع کردیں۔

سپریم کورٹ نے ملازمین برطرفی کیس کا فیصلہ گزشتہ روز محفوظ کرلیا تھا ،ملازمین برطرفی کیس کی اپیلوں پر سپریم کورٹ میں 11 سماعتیں ہوئیں سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل کی استدعا پر دلائل دینے کا ایک اور موقع دیا ، اٹارنی جنرل نے کہا کہ جن ملازمین کو مس کنڈکٹ اور غیر حاضری پر نکالا گیا ان پر تجاویز کا اطلاق نہیں ہوگا تمام فریقین کے وکلا حکومتی تجاویز کی حمایت کرتے ہیں تو ان پر عمل ہوگا، اگر ملازمین کے وکلا کو حکومتی تجاویز پر اعتراض ہے تو تجاویز واپس لیں گے، سپریم کورٹ نے کہا کہ برطرف ملازمین سے ہمدردی ہے ،عدالت نے آئین اور قانون کو دیکھنا ہے،

حکومت کی جانب سے تجویز دی گئی کہ ایک تا 7 گریڈ تک کے ملازمین کو بحال کر دیا جائے،گریڈ 8سے 17 تک کے ملازمین کے 3ماہ میں ٹیسٹ لیے جائیں، فیڈرل پبلک سروس کمیشن کا ٹیسٹ پاس کرنے والے ملازمین کو مستقل کر دیا جائے، ملازمین کی ماضی کی سروس ایڈ ہاک تصور ہو گی،

کیس کی سماعت جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں 5رکنی لارجر بینچ نے کی تھی 17اگست کو سپریم کورٹ نے سیکڈ ایمپلائز ایکٹ 2010 کالعدم قرار دیا تھا جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے محفوظ فیصلہ 20 ماہ بعد 17 اگست کو سنایا تھا عدالتی فیصلے سے مختلف محکموں کے 16 ہزار سرکاری ملازمین نوکریوں سے برطرف ہوئے

ٹویٹر پر جعلی اکاؤنٹ، قائمہ کمیٹی اجلاس میں اراکین برہم،بھارت نے کتنے سائبر حملے کئے؟

بیس ہزار کے عوض خاتون نے ایک ماہ کی بیٹی کو فروخت کیا تو اس کے ساتھ کیا ہوا؟

بھارت ، سال کے ابتدائی چار ماہ میں کی 808 کسانوں نے خودکشی

سال 2020 کا پہلا چائلڈ پورنوگرافی کیس رجسٹرڈ،ملزم لڑکی کی آواز میں لڑکیوں سے کرتا تھا بات

فیس بک، ٹویٹر پاکستان کو جواب کیوں نہیں دیتے؟ ڈائریکٹر سائبر کرائم نے بریفنگ میں کیا انکشاف

خاتون سے زیادتی اور زبردستی شادی کی کوشش کرنے والا ملزم گرفتار

واش روم استعمال کیا،آرڈر کیوں نہیں دیا؟گلوریا جینز مری کے ملازمین کا حاملہ خاتون پر تشدد،ملزمان گرفتار

کرونا میں مرد کو ہمبستری سے روکنا گناہ یا ثواب

غیرت کے نام پر سنگدل باپ نے 15 سالہ بیٹی کو قتل کر دیا

بیوی طلاق لینے عدالت پہنچ گئی، کہا شادی کو تین سال ہو گئے، شوہر نہیں کرتا یہ "کام”

طالبعلم کے ساتھ گھناؤنا کام کرنیوالا قاری گرفتار،قبرستان میں گورکن کی بچے سے زیادتی

راہ چلتی طالبات کو ہراساں اور آوازیں کسنے والا اوباش گرفتار

طالبات کو کالج کے باہر چھیڑنے والا گرفتار،گھر کی چھت پر لڑکی کے سامنے برہنہ ہونیوالا بھی نہ بچ سکا

پولیس کا قحبہ خانے پر چھاپہ،14 مرد، سات خواتین گرفتار

خاتون کے ساتھ زیادتی ،عدالت کا چھ ماہ تک گاؤں کی خواتین کے کپڑے مفت دھونے کا حکم

موٹرسائیکل پر گھر چھوڑنے کے بہانے ملزم کی خاتون سے زیادتی

88 قبحہ خانوں پر چھاپوں کے دوران 417 ملزمان گرفتار

لاہور میں خاتون کو رکشہ پر ہراساں کرنے کا ایک اور واقعہ

13 سالہ بچے کے ساتھ بدفعلی کرنے والے دو ملزمان گرفتار

پارلیمنٹ 10 سال سروس پر ملازمین کو کوئی ریلیف دینا چاہیے تو دے سکتی ہے ،سپریم کورٹ

ملازمین کو نکالنے کا عمل درست تھا،سپریم کورٹ کے ریمارکس

کیا قانون کی حکمرانی کے بغیر معاشرہ آگے چل سکتا ہےِ سپریم کورٹ

Leave a reply